Category Archives: Feelings

Hamari Mehdood Soch

قسمت سے لڑنا اصل میں خدا سے لڑنا ھے۔قسمت کا لکھا نہیں بدلا جا سکتا مگر صرف دعا سے کہ دعا ھی نا ممکن کو ممکن بناتی اور ھاتھوں کی لکیریں بدل دیتی ھے مگر جو قسمت کے لکھے کو خدا کی مرضی جانتے ھوئے صابر و شاکر رھتے ھیں انہی لوگوں کے لیئے وہ فرماتا ھے “ان اللہ مع الصابرین” ، “ان اللہ مع الشاکرین”۔ ھم اپنے چاھنے والوں یا جن کو ھم چاھتے تھے، چھوڑ جانے والوں ، بچھڑ جانے والوں ، کوچ کر جانے والوں کہ جن پر صور پھونکا جا چُکا ان کو بھُلا نہیں سکتے۔کبھی کبھی اُن کی یاد اس کُونج کی طرح کُرلاتی ھے جو اپنے ڈار سے بچھڑ گئی ھو۔ آنسوؤں کا بہہ نکلنا یا آنکھ کا نم ھونا فطری جذبہ ھوتا ھے لیکن اس میں گِلہ نہیں ھونا چاھئیے کہ “یوں نہ ھوتا تو کیا ھوتا” ۔ ھم محدود ذھنوں سے سوچتے ھیں اور وہ ذات جو لا محدود ھے جو کرتی ھے بہتر کرتی ھے لیکن اُس لا محدود ذات کے فیصلے ھمارا محدود ذھن سمجھ نہیں پاتا اور ھم بچھڑی کُونج کی طرح کُرلاتے ھیں۔

via Bukhari sahab.

Advertisements

Bloody Poetry

We could say so many things.
Flip a coin, decide on our fate.
We’re done introspecting with mirrors.
They are dignified liars.

I have had my fair share of gregarious
pleasantries, cold exchanges
with punctuations in our lives.
Commas, periods and fairly long stint
of ellipses. No more.
Not again.

Flashbacks are rarely pleasant, barely cinematic.
The truth is tattooed , exhibited ,pawned and sold.
Everything sells. It’s a buyer’s market.
All you need is the best bid.

See the colour of our currency ?
Red! Inked with colours
abandoned on our palette.
It is high time we molted too.

If you think I’d apologise,
For breathing blood in my words,
You’re mistaken.
The metaphors and similes have been
bartered long ago.

Analogies have been mutilated.
Allusions are extinct.

I present to you a corpse of
What I think is the remainder of,
A bloody poetry.

%d bloggers like this: